اسلام ٹائمز 19 May 2018 گھنٹہ 18:34 https://www.islamtimes.org/ur/interview/725657/مسلم-امہ-کی-موجودہ-صورتحال-ذمہ-دار-او-ا-ئی-سی-ہے-سینیٹر-فرحت-اللہ-بابر -------------------------------------------------- فلسطین کی موجودہ صورتحال کے ذمہ دار چند عرب لیڈران ہیں ٹائٹل : مسلم امہ کی موجودہ صورتحال کی ذمہ دار او آئی سی ہے، سینیٹر فرحت اللہ بابر -------------------------------------------------- اپنے خصوصی انٹرویو میں پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنما کا کہنا تھا کہ مجھے نہیں معلوم کہ مجھے یہ بات کس حد تک کرنی چاہیے، لیکن کچھ عرب ممالک کے سربراہان حال ہی میں جنہوں نے امریکہ کا دورہ کیا اور وہاں فلسطین کے حوالے سے جو باتیں کیں، اس سے معلوم ہوتا ہے کہ ان رہنماوں کی فلسطین کے حوالے سے جو کمٹمنٹ ہے، وہ مضبوط نہیں ہے۔ متن : پیپلزپارٹی کے رہنماء سینیٹر فرحت اللہ بابر ایک متحرک شخصیت ہیں۔ بائیں بازوں کی سوچ رکھتے ہیں، وہ ایک قانون ساز سیاست دان، صحافی اور حقوق انسانی کے کارکن ہیں۔ وہ مسلسل سماجی موضوعات پہ آواز اٹھانے کیوجہ سے ایک باعزت سیاستدان اور سماجی رہنماء کے طور پر پہچانے جاتے ہیں۔ وہ ایک فلسفی کیطرح سوچتے ہیں اور اس پر عمل کرتے ہیں۔ سابق صدر آصف علی زرداری کے ترجمان بھی رہ چکے ہیں۔ 2003ء سے 2006ء کے دوران پیپلزپارٹی کے سینیٹر رہے، اسکے بعد بھی مسلسل سینیٹر منتخب ہوتے آئے ہیں، تاہم اس بار وہ پارٹی کا ٹکٹ لینے میں کامیاب نہ ہوسکے۔ اسلام ٹائمز نے فرحت اللہ بابر سے فلسطین کے ایشو پر ایک انٹرویو کیا ہے، جو پیش خدمت ہے۔ادارہ اسلام ٹائمز: فلسطین میں ہونیوالے مظالم پر آپ اور آپکی جماعت کا کیا موقف ہے۔؟ فرحت اللہ بابر: فلسطین پر جو ہوا ہے، اس پر میں اور میری جماعت شدید مذمت کرتے ہیں، یہ جو فیصلہ کیا گیا ہے کہ امریکی سفارتخانے کو بیت المقدس شفٹ کیا جائے، ہم امریکی صدر کے اس فیصلے کو انتہائی غلط فیصلہ سمجھتے ہیں۔ میں سمجھتا ہوں کہ اس کے دور رس مضمرات ہوں گے، اسرائیلی مظالم سے 62 افراد شہید ہوگئے ہیں، اس کے بھی دور رس نتائج برآمد ہوں گے اور صورتحال مزید گھمبیر ہوگی۔ پہلے ہی مشرق وسطیٰ کی صورتحال خاص طور پر یمن کی وجہ سے اور امریکی صدر کی جانب سے ایران معاہدے سے نکلنے سے خراب ہے اور اب یہ واقعہ ہوگیا ہے تو ہم اس وقت آتش فشاں پر بیٹھے ہیں۔ اسلام ٹائمز: اقوام متحدہ اور دیگر عالمی ادارے اپنا رول کیوں ادا نہیں کر رہے۔؟ فرحت اللہ بابر: دیکھیں، میں سمجھتا ہوں کہ یہ اقوام متحدہ اور دیگر بین الاقوامی اداروں کی ذمہ داری ہے کہ وہ ان مظالم کا نوٹس لیں اور ان ظالموں کے ہاتھوں کو روکیں، ورنہ مشرق وسطیٰ آتش فشاں پر کھڑا ہے اور کسی بھی وقت پھٹ سکتا ہے، جس سے ایک بڑا بحران جنم لے سکتا ہے۔ اس تمام صورتحال پر غور و خوض کی ضرورت ہے۔ اسلام ٹائمز: مسلم دنیا کو کہاں دیکھ رہے ہیں۔؟ فرحت اللہ بابر: عرب دنیا ذاتی مفادات کا شکار ہے اور ایک پلیٹ فارم پر جمع نہیں، مجھے نہیں معلوم کہ مجھے یہ بات کس حد تک کرنی چاہیے، لیکن کچھ عرب ممالک کے سربراہان جنہوں نے حال ہی میں امریکہ کا دورہ کیا اور وہاں فلسطین کے حوالے سے جو باتیں کیں، اس سے معلوم ہوتا ہے کہ ان رہنماوں کی فلسطین کے حوالے سے جو کمٹمنٹ ہے، وہ مضبوط نہیں ہے۔ اسلام ٹائمز: او آئی سی کس مرض کی دوا ہے۔؟ فرحت اللہ بابر: میں سمجھتا ہوں کہ او آئی سی بہت کچھ کرسکتی ہے، لیکن او آئی سی کچھ بھی نہیں کر پائے گی، کیونکہ او آئی سی خود تذبذب کا شکار ہے، اس لئے کچھ نہیں کر پائے گی اور اندرونی خلفشار ہونے کی وجہ سے او آئی سی سے امید نہیں لگانی چاہیں، اس صورتحال میں ایک ایسی لیڈر شپ کی ضرورت ہے، جو مسلم امہ کو جوڑ اور مسائل کے گرداب سے نکال سکے۔ اسلامی دنیا ایک بڑے خطرے سے دوچار ہے، اس کی ذمہ دار او آئی سی ہے، او آئی سی کی ذمہ داری سے مراد کچھ رہنما ہیں، جو اس صورتحال کے ذمہ دار ہیں۔ اسلام ٹائمز: پاکستان کے عوام اور حکومت کیا کرسکتے ہیں۔؟ فرحت اللہ بابر: بحیثیت قوم اور ملک ہمارا فلسطینی عوام کے ساتھ جو رشتہ ہے، اس کی بنیاد پر آواز اٹھاتے ہیں، اس لئے ہمارے عزم میں کمی نہیں آنی چاہیے، ہمیں کوشش کرنی چاہیئے کہ او آئی سی میں موجودہ اختلاف کو کم کیا جائے، چند روز قبل جو ہوا، اسی طرح آپ کو یاد ہو کہ مسجد اقصیٰ جلانے پر اسلامی سربراہی کانفرنس ہوئی تھی، اس پر بھی او آئی سی کا ایک غیر معمولی اجلاس بلانا چاہیے، جس میں محض اس ایک نکاتی ایجنڈے پر بات کرنی چاہیئے۔ تمام اسلامی دنیا میں اختلافات ہیں اور اگر ختم نہ ہوں تو اسے بڑھنے سے روکا جائے۔ میں سمجھتا ہوں کہ دنیا میں اور بھی مظلوم اور محروم قومیں ہیں، لیکن یقین کریں کہ فلسطینیوں کو سب سے زیادہ مظلوم اور محروم سمجھتا ہوں، اگر ان کی مظلومی اور محرومی کا ازالہ نہ کیا گیا تو جو لاوا پک رہا ہے، وہ ایک دن ضرور پھٹے گا، اس سے صرف فلسطینوں کو ہی نہیں پورے خطے کو نقصان ہوسکتا ہے۔