اسلام ٹائمز 25 Mar 2020 گھنٹہ 15:50 https://www.islamtimes.org/ur/news/852513/لاک-ڈاؤن-کی-خلاف-ورزی-ا-ئی-جی-سندھ-نے-شہریوں-کو-گرفتار-کرنے-سے-روک-دیا -------------------------------------------------- ٹائٹل : لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی، آئی جی سندھ نے شہریوں کو گرفتار کرنے سے روک دیا -------------------------------------------------- سندھ پولیس کے افسران و جوانوں کو اپنے پیغام میں مشتاق مہر نے کہا ہے کہ اس بات کا قوی خدشہ ہے کہ یہ بحران روز بروز بڑھتا جائے گا، ہمیں امن و امان قائم رکھنے کے لئے اپنے فرائض کی انجام دہی جاری رکھنی ہوگی اور اس نئی صورتحال میں ہمیں پولیسنگ بھی ایک نئے طریقے سے کرنی ہوگی۔ متن : اسلام ٹائمز۔ آئی جی سندھ مشتاق مہر نے پولیس فورس کو اپنے دوسرے اہم پیغام میں مخاطب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم اس وقت ایک غیر معمولی صورتحال سے گزر رہے ہیں۔ پولیس کے محکمے کو آئندہ آنے والے ہفتوں اور مہینوں میں اس صورتحال کے پیش نظر انتہائی اہم کردار ادا کرنا ہے، بدقسمتی سے ہم ایسے لوگوں کو گرفتار کر رہے ہیں جو بذات خود حالات کے جبر کا شکار ہیں، ہمیں ایسے افراد سے تحمل اور ہمدردی سے پیش آنا ہوگا، مشکل کے اس وقت میں پولیس عام شہریوں کو گرفتار کرنے کے بجائے انہیں درپیش آفت سے آگاہ کرکے شائستگی سے انتباہ کے ساتھ جانے دے، مشکل کی اس گھڑی میں پولیس لازمی طور پر عوام دوست اور ہمدرد کے طور پر سامنے آئے نہ کہ عوام میں اس کا ناپسندیدہ و بے رحم تاثر قائم ہو۔ مشتاق مہر نے سندھ پولیس کے افسران و جوانوں کو اپنے پیغام میں مزید کہا ہے کہ اس بات کا قوی خدشہ ہے کہ یہ بحران روز بروز بڑھتا جائے گا، ہمیں امن و امان قائم رکھنے کے لئے اپنے فرائض کی انجام دہی جاری رکھنی ہوگی اور اس نئی صورتحال میں ہمیں پولیسنگ بھی ایک نئے طریقے سے کرنی ہوگی۔ قانون نافذ کرنے کے عمل کے دوران ہمیں خلاف ورزی کرنے والوں کو روایتی قانون شکن نہیں سمجھنا چاہیئے۔ آئی جی سندھ نے فیلڈ میں کام کرنے والے افسران و جوانوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وہ علاقہ معززین کی مدد سے ایسے لوگوں کی نشاندہی کریں جن کی آمدنی انتہائی کم ہے، لہذا ہمیں قانون نافذ کرنے کے ساتھ ساتھ ایسے لوگوں کی مدد کرنے اور انہیں سہولیات پہنچانے کا انتظام بھی کرنا ہے، ہمیں ایک مددگار کا بھی کردار ادا کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس ایسے مخیر حضرات کی فہرست موجود ہو جو ضرورت کی اس گھڑی میں لوگوں کو خوراک اور ادویات پہنچا سکتے ہوں۔ مشتاق مہر نے کہا کہ آنے والے دنوں میں ہمیں بھوک، بیروزگاری اور بیمار افراد کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے، عوام کے پاس ضروریات زندگی کی اشیاء کی کمی ایک سنگین مسئلہ ہوگا جو عوامی میں بے چینی اور امن و امان کی صورتحال خراب کرنے کا باعث بن سکتا ہے، ضلع کی تمام کچی آبادیوں میں ایسے نمائندگان مقرر کئے جائیں جو ان آبادیوں میں روز مرہ معاملات خصوصاً کسی کے انتقال کے موقع پر نماز جنازہ و تدفین کی رسومات یا پر ان علاقوں میں کھانے پینے اور فراہمی آب کی کمی کے سلسلے میں ڈی آئی جی آفس میں نامزد افسر رابطے میں رہیں۔ مشتاق مہر نے کہا کہ میڈیا کے تعاون سے عوام کے سامنے اس حقیقت کو بھی پیش نظر رکھا جائے کہ مشکل کے اس وقت میں بھی سندھ پولیس سے وابستہ افسران و جوان اپنی جانوں کو لاحق خطرات کو بھی خاطر کو لائے بغیر عوام کی حفاظت اور انھیں مشکل حالات سے نکالنے کے لئے مستعد ہیں۔ آئی جی سندھ اپنے پیغام میں مزید کا ہے کہ حالات کو بلوہ (فساد ، جھگڑے) کی طرف جانے سے روکنے کے لئے بھرپور اقدامات کئے جائیں اور یہ بات ذہن نشین کرلیں کہ ملکی تاریخ کے سب سے مشکل ترین دور میں صورتحال کسی بھی وقت ہماری سوچ کے برعکس بدتر ہو سکتی ہے، اس لئے جس قدر ہو سکے عوامی تحفظات کے لئے اقدامات کئے جائیں کیونکہ اس وقت احتیاطی تدابیر اختیار نہ کرنے اور خود کو اپنے گھروں تک محدود نہ کرنے والے اگر بڑے پیمانے پر اس مہلک بیماری میں مبتلا ہوئے تو مریضوں کی ایک بڑی تعداد کی زندگیوں کو خطرہ لاحق ہوسکتا ہے۔