0
Monday 29 Oct 2018 22:30

از نجف تا کربلا، ''ھیات منا الذلہ''…

از نجف تا کربلا،
تحریر: سید نجیب الحسن زیدی
 
نجف سے کربلا تک گامزن عشق کے سیلاب کی گھن گرج یقینا باطل پرست طاغوتی طاقتوں کی نیندیں حرام کر دینے کا سبب ہے، خاص کر اس عظیم اجتماع میں جب کربلا کے وہ نعرہ لگتے ہوں گے جنہیں امام حسین علیہ السلام عظیم سرمایہ کے طور پر چھوڑ کر گئے، تو دشمنان دین و اسلام پر اور بھی گراں گزرتا ہوگا کہ تمام تر چالوں کے باوجود وہ کربلا کے حقیقی معارف سے اس قوم کے رشتے کو نہ توڑ سکے اور جس قوم کو کبھی اقتصادی ناکہ بندی کر کے کبھی لشکر کشی کے ذریعہ دبانا چاہا وہ ہر منزل پر کربلا کا سہارا لیکر مزید ابھری اور اسکی زباں پر نعرہ تھا ھیات منا الذلہ۔ نجف سے کربلا تک کا یہ پیدل مارچ اور عظیم انسانی اجمتاع جہاں ایک عزت مند سماج کی شاندار تصویر کو دنیا کے سامنے پیش کرتا ہے، وہیں ہمارے وجود میں روح کربلا کے اترنے کا سبب بھی ہے۔ کیا ہی خوب ہو کہ نجف سے کربلا چلتے چلتے ہم اپنے وجود میں وہ کربلا تعمیر کر لیں جس کی تمنا امام حسین علیہ السلام نے آواز استغاثہ بلند کرتے ہوئے کی تھی، حسین فکر کربلا کے محافظوں کو آواز دے رہے تھے کہ تمہیں ہمیشہ کربلائی بن کر رہنا ہے، کربلا صرف ۶۱ ہجری کا واقعہ نہیں ہے بلکہ حق و باطل کے درمیان کا ازلی و ابدی معرکہ ہے۔   تمہیں اس معرکہ میں کربلائی اقدار کے ساتھ آگے بڑھنا ہے اور کربلا کی اہم قدر عزت و سربلندی ہے۔
 
کربلا میں ہرگز کسی بھی مقام پر ایسا نہیں ملے گا کہ مظلومیت کے سبب کربلا والے اپنی عزت سے غافل ہو گئے ہوں، یہ وہ چیز ہے جو ہمیں اپنے اپنے ملک اپنے اپنے معاشروں میں ہزارہا مشکلات کے باجود عزت سے جینے کا سبق دیتی ہے،  لہٰذا جب ہم کربلا پر نظر ڈالتے ہیں تو ہمیں کربلا کے تمام تر ان مناظر میں جو مظلومیت و غم و اندوہ کی ایک داستان خونچکاں کو اپنے دامن میں محفوظ کئے ہوئے ہیں ایک عزت و وقار کا شجاعت و جوش و ولولہ کا ایسا آہنگ نظر آتا ہے جس کی نظیر پوری تاریخ میں نہیں ملتی، اگر آپ طول تاریخ میں جنم لینے والی تحریکوں کا مشاہدہ کریں تو اندازہ ہوگا کہ بہت سی اسی تحریکیں ہیں جنہوں نے انقلابی انداز میں اپنے وجود کو منوایا اور اپنی جان کی بازی لگا کر اپنے ہدف و مقصد کی حفاظت کی، اپنے اہداف کی تکمیل کی خاطر مسلحانہ اقدام کیا، جنگ کا میدان گرم کیا، خود بھی میدان کارزار میں جانفشانیاں کیں اور تاریخ کے لئے عبرتوں کو چھوڑا، لیکن ایسا وقت بھی ان پر آیا کہ تحریک سے جڑے بہت سے افراد کے ذاتی طرز عمل کی بنیاد پر ذلت اٹھانی پڑی اور دشمن کے سامنے گھٹنے ٹیکنے پر کچھ لوگ مجبور ہو گئے۔ لیکن ہمیں کربلا میں یہ چیز کہیں نظر نہیں آتی ہے، اگر کربلا میں حسین (ع) مہلت مانگتے ہیں، تو عزت و سربلندی کے ساتھ، جہاں نصرت طلب کرتے ہیں وہاں بھی عزت کے جلوے ہیں۔
 
مدینہ سے کربلا تک راستے میں جتنے افراد سے ملاقات ہوتی ہے ہر ایک سے گفتگو میں جس چیز پر توجہ ہے وہ عزت و شرف ہے، لہٰذا نظر آتا ہے کہ بہت سوں کو اپنے ساتھ  شامل بھی کرتے ہیں، جبکہ کچھ ایسے بھی ہیں جن سے گفتگو تو ہوتی ہے لیکن وہ ساتھ دینے پر آمادہ نہیں ہیں۔ اس درمیان جو چیز اہم ہے وہ عزت و سربلندی ہے، چاہے کوئی ساتھ آئے یا نہ آئے جو کربلائی اصول امام حسین (ع) نے پیش کیا وہ عزت و سربلندی ہے، لہٰذا اپنے ساتھیوں کو تلاش کرنے میں بھی کہیں اپنی کمزوری کا اظہار نہیں کیا ہے۔ یہ معمولی بات نہیں ہے کہ جو حسین (ع) انکار بیعت کر چکے اور اسی بنیاد پر میدان کارزار میں یزیدی لشکر کے سامنے ہیں کہ سر دیں گے لیکن یزید کے سامنے اپنے سر کو خم نہیں کریں گے وہی حسین (ع) یزید کے لشکر سے ایک شب کی مہلت مانگ رہے ہیں، جب ہم اس کی تہہ تک جائیں گے تو اندازہ ہوگا کہ خدا کی اطاعت و بندگی  کے لئے مہلت مانگنا، خود اپنے وجود میں عزت و شرف کے مفہوم کو سنبھالے ہوئے ہے۔ چنانچہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اور بنا بر نقل امام صادق علیہ السلام سے بیان ہونے والی حدیث میں اطاعت و بندگی پروردگار کو حصول عزت کا سبب قرار دیتے ہوئے  فرماتے ہیں، "من اراد عزاً بلاعشیرۃ وغنی بلامالٍ وھیبۃ بلاسلطان فلینقل من ذل معصیۃ اللہ الی عز طاعتہٖ" جو کوئی بھی ایسی عزت کا ارادہ کرے جو بغیر قبیلہ و خاندان کے حاصل ہو، مال کے نہ ہوتے ہوئے بھی بے نیاز رہے اور بغیر سلطنت کے ھیبت حاصل کر لے تو وہ خداوند متعال کی نافرمانی کی ذلت سے نکل کر اُس کی اطاعت کی عزت میں آ جائے چونکہ فقط اطاعت میں ہی عزت ہے۔ (1)
 
بہت ہی واضح اور روشن انداز میں  جہاں حدیث یہ بیان کر رہی ہے کہ عزت طاعت الٰہی و بندگی میں ہے، وہیں لوگ عزت کو این و آن کے یہاں سر جھکانے میں تلاش کرتے ہیں جبکہ در خدا کے علاوہ عزت کہیں نصیب نہیں ہونے والی۔ اور اس حقیقت کو بھی حدیث نے یوں بیان کیا ہے، "انی وضعت العز فی قیام اللیل والناس یطلبونها فی ابواب السلاطین فلم یجدوه ابدا"۔ میں نے عزت کو رات یاد خدا میں قیام کرنے میں قرار دیا ہے، جبکہ لوگ سلاطین کے دروازوں پر عزت ڈھونڈ رہے ہیں اور ہرگز انہیں یہ عزت کبھی ملنے والی نہیں ہے۔ (2) اسی لئے امام علی علیہ السلام فرماتے ہیں جب طالب عزت کی رہنمائی کرتے ہوئے فرماتے ہیں، "اذا طلبت العز فاطلبه بالطاعة" جب بھی عزت کی تلاش ہو تو اسے طاعت الٰہی میں ڈھونڈو۔ (3) جس مفہوم کو روایات میں بیان کیا جا رہا ہے، اسکا مکمل مصداق امام حسین علیہ السلام کی ذات گرامی ہے۔ چنانچہ  امام حسین (ع) نے دشمن سے ایک شب کی مہلت مانگ کر بتایا کہ زندگی میں اگر کسی چیز کے لئے حسین کو مہلت درکار ہے گرچہ وہ ایک دن ہی کے لئے کیوں نہ ہو تو وہ طاعت رب ہے، آپ نے جہاں ایک شب کی مہلت یہ کہہ کر لی، "لعلنا نصلی لربنا الیلة وندعوه و نستغفره، فهو یعلم انی کنت احب الصلاة له و تلاوة کتابه وکثرة الدعاء والاستغفار" (4)۔ شاید کہ ہم اس شب میں اپنے رب کی نماز پڑھ سکیں، اسے پکار سکیں، اسکے حضور استغفار کر سکیں، بیشک وہ جانتا ہے کہ میں نماز کو محبوب رکھتا ہوں، تلاوت قرآن اور کثرت دعاء کو پسند کرتا ہوں۔
 
وہیں میدان کارزار میں برستے تیروں کے سائے میں اول وقت نماز پڑھ کے بتایا (5) کہ جو طاعت الٰہی کو اپنی زندگی کا نصب العین بنا لیتا ہے، وہ اتنا شکست نا پذیر ہو جاتا ہے کہ تیروں کے سایہ میں بھی اپنے مقصد سے غافل نہیں رہتا اور دشمن اسے شہید تو کر دیتا ہے لیکن ہرانے میں ناکام رہتا ہے۔ حد تو یہ ہے حسین علیہ السلام اس وقت بھی بندگی پروردگار سے غافل نہ رہے جب نشیب میں  جسم اطہر تیروں سے چھلنی تھا زخموں پر زخم لگ رہے تھے اور نشیب سے ایک ہی آواز آ رہی تھی، "لا اله سواک یا غیاث المستغیثین ما لی رب سواک ولا معبود غیرک، صبرا علی حکمک"۔ (6) تیرے علاوہ کوئی خدا نہیں ہے اے فریاد کرنے والوں کی فریاد سننے والے ، تیرے علاوہ میرا کوئی رب نہیں ہے، اور نہ تیرے علاوہ کوئی معبود ہے، میں تیرے فیصلہ پر صابر و راضی ہوں۔ امام حسین علیہ السلام کا کردار اور آپ کے فرامین و ارشادات میں نمایاں طور پر آپکے عزتمندانہ طرز عمل کو دیکھا جا سکتا ہے۔ آپ کے اقوال کی روشنی میں کہا جا سکتا ہے کہ قرآنی تعلیمات کے پیش نظر آپ عزت کو ذات خدا میں منحصر سمجھتے ہوئے اس بات کی طرف متوجہ کرتے ہیں کہ جسے بھی عزت چاہیئے ہے اس کے لئے ضروری ہے کہ کہ وہ خدا کی طرف رجوع کرے۔
 
چنانچہ آپ خدا کے حضور مناجات کرتے ہوئے فرماتے ہیں، "یامن خصّ نفسہ بالسموو الرفعۃ و اولیاۂُ بعزہ یعستزون" اے وہ ذلت جس کا نفس بلندی اور رفعت کے ساتھ مخصوص ہے اوراس کے اولیاء اس کی عزت سے تمسک کی وجہ سے عزت پاتے ہیں۔(7) ایک اور مقام پر فرماتے ہیں۔ "یا من دعوتہ ذلیلا فاعزنی" (8)۔ اے وہ کہ جسے میں نے ذلت کی حالت میں پکارا تو اس نے مجھے عزیز کر دیا۔ انت الذی اعززت (9) پروردگارا یہ تیری ہی ذات ہے جس نے مجھے عزت بخشی۔ آپکی اس گفتگو کی روشنی میں یہ کہنا بےجا نہ ہوگا کہ آپ اس بات کی طرف متوجہ کرنا چاہتے ہیں کہ خدا کے علاوہ کسی اور سرچشمہ سے عزت کی خواہش و آرزو بے سود و بے وجہ ہے کیونکہ مبدا و ماخذ عزت ذات پروردگار ہے۔ اب جو لوگ مال و زر کو عزت کا وسیلہ سمجھتے ہیں ان کو یہ سمجھ لینا چاہیئے کہ یہ مال و دولت کے بل پر حاصل ہونے والی عزت اول تو عزت نہیں اور اگر وقتی طور پر مان بھی لیا جائے تو یہ وہ عزت ہے جو فانی و وقتی ہے اور مال و ثروت کے جاتے ہی یہ بھی چلی جائے گی۔ آپ سے منسوب یہ شعر اس حقیقت کو بیان کرنے کے لئے کافی ہے جہاں آپ فرماتے ہیں، "ایعتز الفتی بالمال زھوا وما فیھا بفوت عن اعتزاز" (10) کیا ایک جوان مال و منال پر فخر کرتے ہوئے عزت کا طالب ہو سکتا ہے  جبکہ مال کے ختم ہونے کے ساتھ اس کی عزت بھی ختم ہو جانے والی ہے۔ آپکے مطابق دنیا اور جو کچھ اس کی رنگینیاں ہیں ان کی اسی بنیاد پر کوئی اہمیت نہیں کہ سب فانی و ختم ہو جانے والی ہیں، "ھل الدنیا و ما فیھا جمیعا سوی ظل یزول مع النھار" (11)۔ کیا دنیا اور اس کے اندر جو کچھ ہے وہ ایک سایہ کی طرح نہیں ہے جو دن کے ڈھلتے ہیں ختم ہو جانے والا ہے۔ شک نہیں  کہ دنیا اور اس کی حقیقت کو سمجھنے والا ہی یہ کہہ سکتا ہے "وما ان طبنا جبن" ہمارا شیوہ خوف کھانا نہیں ہے۔ بلکہ حیات عزت و ذلت کے مفہوم کو حیات و موت سے عبارت قرار دیتے ہوئے آپ فرماتے ہیں، "موت فی عز خیر من حیاۃ فی ذل" (12)۔ عزت کے ساتھ موت ذلت کے ساتھ جینے سے بہتر ہے۔ اور اپنے اس بیان کی تشریح ایک دوسری جگہ یوں فرماتے ہیں:
انی لا اری الموت الا سعادہ
والحیاۃ مع الظالمین الا برما
(13)
میں موت کو اپنے لئے سعادت و کامیابی اور ظالموں کےساتھ جینے کو ننگ و عار سمجھتا ہوں۔
 
یہ عزت و شرف شجاعت اور جوش و ولولہ کا انداز ہے، جو حسینی تحریک میں ہر طرف موجزن نظر آتا ہے، ایسا نہیں ہے کہ محض کربلا میں ہو، بلکہ ہر اس جگہ نظر آئے گا جس نے خود کو فکر کربلا سے متصل کر لیا چنانچہ، عراق ہو شام و ایران یا لبنان جہاں اس فکر کے سائے میں پروان چڑھنے والوں کو دشمن نے ٹیڑھی نظر سے دیکھا ہے، انہیں منہ کی کھانی پڑتی ہے۔ اور ہونگے جو کہتے کچھ ہیں کرتے کچھ ہیں، لیکن ہم ہیات منا الذلۃ کا نعرہ لگانے والے جو کہتے ہیں اس پر عمل بھی کر دکھاتے ہیں۔ یہ حقیقت میں کربلائی طرز فکر ہے، جہاں محض اپنے اوپر ہونے والے ظلم کا نظارا نہیں کیا جاتا بلکہ کمر ہمت باندھ کر اٹھا جاتا ہے اور دشمن کو کرارا جواب دے کر بتایا جاتا ہے کہ ہمارا تعلق کس مکتب سے ہے، اور دنیا سمجھ جاتی ہے کہ مکتب کربلا سے تعلق رکھنے والے لوگوں کو نہ ڈرایا جا سکتا ہے نہ دھمکایا جا سکتا ہے۔ جہاں یہ اپنے شہداء کی لاشیں اپنے کاندھوں پر عزت و سربلندی کے ساتھ اٹھانا جانتے ہیں وہیں دشمن کی لاشیں بچھا کر اسے سبق سکھانا بھی جانتے ہیں کہ کربلا انکے پہلو میں دل بن کر دھڑک رہی  اور آواز دے رہی ہے ہیھات منا الذلۃ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حواشی:
1۔ بحارالانوار، جلد ۷۸ ص ۱۹
2۔ سید محمد حسینی عاملی، 11 ه . ق، اثنا عشریة، ص 15
3۔ عبدالواحد آمدی، غررالحکم، شماره 4056
4۔ مجلسی، بحار الانوار، ج 44، ص 391
5۔ مجلسی، بحار الانوار، ج 45، ص 17
6۔ عبدالرزاق مقرم، مقتل الحسین علیه السلام (دارالکتاب)، ص 345 .
7۔ موسوعۃ کلمات امام حسینؑ، ص۷۹۷۔مفاتیح الجنان،دعای عرفہ۔
8۔ موسوعۃ کلمات امام حسینؑ، ص۷۹۷
9۔  ایضاً
 10۔ ایضاً
 11۔ ایضاً
 12۔ موسوعہ کلمات امام حسین
خبر کا کوڈ : 758449
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے