0
Friday 18 Oct 2019 09:30

اربعین ملین مارچ کا پیغام

اربعین ملین مارچ کا پیغام
اداریہ
گذشتہ کئی دنوں سے جاری اپنی نوعیت کا منفرد و بے مثال اربعین ملین مارچ اپنی منزل و ھدف کے قریب پہنچنے کو ہے۔ دنیا کے کونے کونے سے ہوائی جہازوں، ٹرینوں، بسوں اور ذاتی گاڑیوں سے آنے والے عاشقان حسینؑ، نجف اشرف سے کربلا معلیٰ کیطرف رواں دواں ہیں اور آج یا کل تقریباَ سب زائرین بین الحرمین پہنچ کر اپنے مولد و آقاء سیدالشہداؑ کے حرم میں داخل ہو کر اپنے قلب و ذہن کو حسینیؑ نور سے روشن و منور کرینگے۔ نجف سے کربلا یا عراق کے دوسرے شہروں سے آنے والے زائرین کے بدن تھکاوٹ سے چور ہوں گے، پاؤں میں چھالے پڑ چکے ہونگے، بدن کا ایک ایک حصہ مسلسل چلنے سے درد و تکلیف میں مبتلا ہو چکا ہوگا، چہروں پر راستے کے گرد و غبار کی دھول جمی ہوگی۔

مسلسل دھوپ میں پیدل سفر کیوجہ سے زائرین کی جلد کا رنگ تبدیل ہو چکا ہوگا۔ لیکن یہ سب ظاہری تبدیلیاں اور علامات ہیں۔ اس اربعین ملین مارچ میں شرکت کرنیوالوں کی باطنی تبدیلیوں کو الفاظ میں بیان کرنا ناممکن ہے۔ چند دن کی اس ریاضت نے زائر کے قلب و روح کو ایک نئی دنیا سے آشنا کر دیا ہے، ایک ایسی دنیا جس کا مرکز و محور نواسہ رسولؐ، حضرت امام حسینؑ کی ذات ہے، ایسی دنیا جس میں ذات کی صرف اور صرف ایک پہچان ہے اور وہ پہچان حسینی ہونا ہے۔ اربعین ملین مارچ میں شریک ہر زائر اپنے آپ کو ایک ایسے بے کراں کربلائی سمندر سے متصل کرلیتا ہے، جسکی آخری انتہاء ایسی عالمی حکومت اور ایسے آفاقی مثالی معاشرے کا قیام ہے۔

جس معاشرے کی ہر نبیؑ و رسلؑ اور امامؑ نے آرزو کی تھی۔ اربعین ملین مارچ جہاں اتحاد و وحدت کا پیغام ہے، جہاں امن و آشتی اور اعلیٰ و ارفعٰ انسانی اقدار کا عملی مظہر ہے، وہاں خوف و ہراس، حزن و ملال، مایوسیوں، جہالتوں اور گمراہیوں کے گھٹاٹوپ اندھیرے سے مصباح الھدیٰ کے ذریعے سفینۃ النجات تک پہنچنے کا وسیلہ بھی ہے۔ اربعین ملین مارچ نے ایک بار پھر ببانگ دہل اعلان کر دیا ہے کہ کربلا کے لق و دق صحرا میں جو مقدس خون بہا تھا وہ آج بھی انسانیت کی رگوں میں گردش کرتے ہوئے پکار پکار کر کہہ رہا ہے " ھیھات من الذلہ"، ذلت ہم سے دور ہے۔ اربعین ملین مارچ کا یہ سلوگن دعوتِ عمل دے رہا ہے۔ لبیک یا حسینؑ لبیک یا مہدیؑ!
 
خبر کا کوڈ : 822742
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب