0
Wednesday 7 Jul 2021 12:55

ایٹمی ہتھیاروں سے دستبرداری؟

ایٹمی ہتھیاروں سے دستبرداری؟
تحریر: غزالی فاروق

20 جون 2021ء کو ایچ بی او (HBO) پر ایکسی اوز (Axios) کو انٹرویو دیتے ہوئے وزیراعظم پاکستان عمران خان نے کہا کہ "جیسے ہی کشمیر کا تصفیہ ہو جاتا ہے تو دونوں پڑوسی ممالک (یعنی بھارت اور پاکستان) مہذب لوگوں کی طرح رہنے لگیں گے۔ اس کے بعد ہمیں ایٹمی ہتھیاروں کی ضرورت نہیں ہوگی۔" وزیراعظم عمران خان کی جانب سے اس نوعیت کا یہ کوئی پہلا بیان نہیں۔ اس سے پہلے 24 جولائی 2019ء کو فوکس نیوز کی اینکر پرسن برٹ بائر نے جب عمران خان صاحب سے دریافت کیا تھا   کہ "اگر بھارت یہ کہہ دے کہ وہ اپنے ایٹمی ہتھیاروں سے دستبردار ہو جائے گا تو کیا پاکستان بھی ایسا کرے گا۔؟" تو خان صاحب نے بغیر کسی ہچکچاہٹ کے یہ جواب دیا تھا کہ "جی ہاں، کیونکہ ایٹمی جنگ کوئی آپشن نہیں ہے اور پاکستان و بھارت کے درمیان ایٹمی جنگ خود کو تباہ کرنا ہے۔" ایسے ہی پاکستان کی ایٹمی صلاحیت سے متعلق امریکی خدشات پر خان صاحب نے  امریکا کو یہ کہہ کر یقین دہانی کرائی تھی  کہ، "ہم اپنے ایٹمی پروگرام کے حفاظتی اقدامات کے حوالے سے امریکا کے ساتھ انٹیلی جنس معلومات کا تبادلہ کرتے رہتےہیں۔"

بجائے اس کے کہ حکومت دنیا کو یہ پیغام دے کہ ہمارا ایٹمی پروگرام کس قدر مضبوط اور طاقتور ہے، تاکہ پاکستان یا امت مسلمہ کی جانب کوئی میلی آنکھ سے دیکھنے کی جسارت بھی نہ کر پائے، حکومت بار بار یہ اعلان کر رہی ہے کہ وہ خود ایٹمی ہتھیاروں سے دستبردار ہونے کے لیے مکمل تیار ہے، جبکہ اس کے بالکل برعکس   پوری دنیا میں ایٹمی ہتھیاروں اور میزائلوں کو جدید سے جدید تر بنانے کی دوڑ لگی ہوئی ہے۔ اسی طرح ہم نے دیکھا تھا کہ اس سال 28 مئی کو پاکستان کے ایٹمی تجربات کی یادگار کے موقع پر، بجائے اس  کے کہ حکومت کی جانب سے ایک طاقتور پیغام جاری کیا جاتا، جس میں پاکستان کے یوم تکبیر پر "قابل اعتبار ڈیٹرینس"(Credible deterrence) یا "ہمہ جہتی ڈیٹیرینس "(Full spectrum deterrence) کے مضبوط موقف کا اعادہ کیا جاتا، حکومت نے ایک نہایت کمزور موقف اپنایا۔ لہٰذا 29 مئی 2021ء کو عمران خان صاحب کے نیشنل کمانڈ اتھارٹی (این سی اے) کا دورہ کرنے کے بعد وزیراعظم آفس (پی ایم او) کی جانب سے  فقط ایک کمزور سی پریس ریلیز جاری کی گئی۔

پھر اس سلسلے میں حکومت کی جانب سے اس سے بڑھ کر لاپرواہی و غفلت اور کیا برتی جا سکتی ہے کہ خان صاحب، جو نیوکلئیر کمانڈ اتھارٹی کے سربراہ بھی  ہیں، 2018ء میں وزیراعظم بننے کے بعد یہ ان کا کسی جوہری مقام کا پہلا دورہ تھا  اور اس میں انہوں نے پہلی بار اس اتھارٹی کے اجلاس کی صدارت کی، حالانکہ یہ ہتھیار پاکستانی سائنسدانوں، انجینئروں اور دیگر سٹیک ہولڈرز کی دہائیوں کی انتھک اجتماعی کاوشوں کا ثمر ہیں۔ پاکستان کے جوہری پروگرام کے حوالے سے پاکستان کی موجودہ اور گذشتہ حکومتوں کی لاپرواہی جوہری میزائلوں کے تجربات کی خطرناک حد تک کم تعداد سے بھی عیاں ہے جبکہ مضبوط ڈیٹیرنس کیلئے مسلسل تجربات اور بھرپور سائنسی تحقیق و ترقی کلیدی نوعیت کی حامل ہے۔

 پاکستان کی حکومت کی ان سنگین غفلتوں کے برعکس مودی کی قیادت تلے   بھارت کی ہندو ریاست، امریکہ، فرانس اور روس سے جدید ترین ہتھیاروں کی مسلسل خریداری کر رہی ہے، جبکہ بار بار اور بڑے پیمانے پر میزائل تجربات کے ذریعے پاکستان اور چین دونوں کو دھمکی آمیز ایٹمی ڈیٹیرینس کے مضبوط سگنل بھی  بھیج رہی ہے۔ لہٰذا ان سنجیدہ حالات میں امریکہ میں وزیراعظم عمران خان صاحب کی جانب سے    پاکستان کے ایٹمی ہتھیاروں سے متعلق دیا گیا بیان انتہائی خطرناک ہے۔ درحقیقت یہ بیان پاکستان کے ایٹمی ہتھیاروں پر کمپرومائز سے متعلق عوام کے جذبات کو پرکھنے کی ایک کوشش ہے۔ اس لیے اس کی بھرپور مذمت کی ضرورت ہے، تاکہ ایسے کسی امکان کو ہی خارج از بحث قرار دے دیا جائے، بالکل ویسے جس طرح ماضی میں سابق صدر زرداری نے "ایٹمی ہتھیار کے استعمال میں پہل نہ کرنے" (No First Strike Agreement) کی بات کی تھی اور جس پر شدید ردعمل نے انہیں اپنی بات سے پیچھے ہٹنے پر مجبور کر دیا تھا۔

پاکستان کو اسلامی ریاست بنانے کا دعویٰ کرنے والے وزیراعظم عمران خان صاحب کی جانب سے اس قسم کا بیان افسوس ناک ہونے کے ساتھ اسلام کے خلاف اور  اس دنیا کی روایات سے بھی ناواقفیت کا ثبوت بھی ہے۔ کمزوری ہمیشہ ظالم کو مزید ظلم کا موقع فراہم کرتی ہے جبکہ طاقت ظلم کو روکنے میں مدد گار ثابت ہوتی ہے۔ کیا بھارت نے 1971ء کی جنگ میں پاکستان کو دولخت نہیں کر دیا تھا کہ یہ کہا جائے کہ کشمیر کا حل نکلنے کے بعد ایٹمی ہتھیاروں کی ضرورت نہ ہوگی؟ کیا اس جنگ کا تعلق کشمیر سے تھا؟ کیا بھارت نے سیاچن پر قبضہ نہیں کیا؟ کیا پاکستان کے تین دریا بھارت سے گزر کر نہیں آتے، جس پر پاکستان آئے دن بھارت سے بلیک میل ہوتا رہتا ہے۔؟ کیا اس کا تعلق بھی محض کشمیر سے ہے؟ کیا بھارت ہمیشہ پاکستان کو نیچا دکھانے یا کمزور سے کمزور تر کرنے کے مواقع تلاش نہیں کرتا رہتا۔؟ یہ ہندو ریاست تو ہندوستان کے ان مسلمانوں کو برداشت نہیں کرتی، جو اس کے اپنے شہری ہیں۔

پھر پاکستان کے ایٹمی ہتھیار رکھنے کے باوجود بھارت کولڈ اسٹارٹ (Cold Start) اور اس جیسے دیگر جارحانہ جنگی منصوبے (ملٹری ڈاکٹرائین) تشکیل  دینے سے باز نہیں آیا اور بھارت اپنے اسلحے کے ذخائر میں زبردست اضافہ امریکا کی مکمل آشیر باد سے کر رہا ہے، کیونکہ اس طرح بھارت خطے میں چین کی مخالفت کرنے اور مسلمانوں کو کچلنے میں امریکا کا معاون و مددگار بن سکے گا تو آخر خان صاحب کس بنیاد پر اس قسم کے بیانات دے رہے ہیں؟!! جہاں تک امریکا کے ساتھ ہمارے ایٹمی پروگرام کے حوالے سے انٹیلی جنس معلومات کے تبادلے کی بات ہے تو یہ  یقیناً اسلام، پاکستان اور خطے کے مسلمانوں کے ساتھ وفاداری نہیں۔ اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے فرمایا، وَأَعِدُّوا لَهُمْ مَا اسْتَطَعْتُمْ مِنْ قُوَّةٍ وَمِنْ رِبَاطِ الْخَيْلِ تُرْهِبُونَ بِهِ عَدُوَّ اللَّهِ وَعَدُوَّكُمْ وَآخَرِينَ مِنْ دُونِهِمْ لاَ تَعْلَمُونَهُمُ اللَّهُ يَعْلَمُهُمْ "اور جہاں تک ہوسکے بھرپور قوت اور گھوڑوں کو تیار کرنے کے ذریعے ان کے مقابلے کی تیاری کرو، جس کے ذریعے تم  اللہ کے دشمنوں اور اپنے دشمنوں اور ان کے علاوہ اور لوگوں کو بھی جن کو تم نہیں جانتے،اللہ جانتا ہے، خوفزدہ کرسکو" (الانفال 8:60)

ہمارا عظیم دین ہم پر لازم کرتا ہے کہ ہم جدید ترین فوجی صلاحیت حاصل کریں، جس میں ایٹمی ہتھیار، سٹیلتھ ٹیکنالوجی، مصنوعی ذہانت اور خلائی ٹیکنالوجی کی صلاحیت بھی شامل ہے، تاکہ ہمارے دشمن ہم سے خوفزدہ رہیں۔ ہمارے ایٹمی ہتھیاروں کا مقصد صرف ہندو ریاست ہی کو خوفزدہ رکھنا نہیں ہونا چاہیئے بلکہ اس پروگرام کا مقصد امریکا اور اسرائیل سمیت تمام  اسلام دشمنوں کو خوفزدہ کرنا ہونا چاہیئے۔ ہماری فوجی برتری کا مقصد صرف ایک دشمن کا مقابلہ کرنا نہیں ہونا چاہیئے بلکہ اس کا مقصد دنیا میں ظلم کی بالادستی کو ختم کرکے اسلام کی بالادستی کا قیام  ہونا چاہیئے۔ آج ایٹمی ہتھیاروں سے دستبرداری کی بات کرنے کی بجائے ہمیں ایک ایسی قیادت کی ضرورت ہے، جو ہماری زبردست فوجی صلاحیتوں کو امریکی راج  سے چھٹکارا حاصل کرنے، مسلمانوں کے مقبوضہ علاقوں کو آزاد کرنے، امت کو یکجا کرنے اور اس ریاست کو دنیا کی صف اول کی ریاست بنانے کے لیے استعمال کرے۔
خبر کا کوڈ : 942103
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش