0
Tuesday 30 Apr 2013 10:24

کراچی، انتخابی عمل پر حملوں اور یوم سوگ و احتجاج کے باعث معیشت مفلوج ہو گئی

کراچی، انتخابی عمل پر حملوں اور یوم سوگ و احتجاج کے باعث معیشت مفلوج ہو گئی
اسلام ٹائمز۔ شہر قائد میں انتخابی عمل پر حملوں نے معیشت کو مفلوج کر دیا ہے۔ ایک ہفتے میں تین روز ہڑتال اور باقی دن غیر یقینی کی صورتحال نے معیشت کا بھٹہ بٹھا دیا۔ یومیہ اجرت پر کام کرنے والا طبقہ ہو یا تجارت اور صنعت ہر طرف جمود کی صورتحال چھا گئی ہے۔ شہر کے مختلف علاقوں میں بم دھماکوں اور قتل کی وارداتوں کے بعد سیاسی جماعتوں کی جانب سے ہڑتال اور احتجاج کی کال پر ٹرانسپورٹ سمیت کاروباری، صنعتی اور تجارتی سرگرمیاں معطل کر دی جاتی ہیں۔ جس سے صنعتکار، تاجر اور سب سے زیادہ یومیہ اجرت والا غریب طبقہ متاثر ہوتا ہے۔ گزشتہ ہفتے کراچی میں تین دن کاروبار زندگی مفلوج رہا جس کے نتیجے میں مزدور طبقہ اور یومیہ اجرت پر کام کرنے والے افراد پر فاقہ کشی کی نوبت آ گئی ہے جبکہ کاروباری طبقہ بھی مسلسل نقصان سے دوچار ہے۔ معاشی سرگرمیاں جمود شکار ہو گئی ہیں۔ شہر میں ایک دن کی ہڑتال سے معیشت کو 12 ارب روپے کا جھٹکا لگتا ہے۔ ٹرانسپورٹ کی عدم موجودگی سے صنعتوں، دفاتر اور کاروباری مراکز میں حاضری کم جبکہ خام مال اور آرڈرز کی ترسیل نہ ہونے کی وجہ سے صنعتی پہیہ بری طرح متاثر ہوتا ہے۔ پیداواری شعبے کو نقصان کا تخمینہ 10ارب روپے تک جا پہنچا ہے۔ پورٹ پر ایکٹیوٹی متاثر ہونے سے محصولات کی مد میں دو سے ڈھائی ارب روپے نقصان کا سامنا ہوتا ہے۔
خبر کا کوڈ : 259253
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب