0
Tuesday 3 Mar 2015 10:32

ایران میں منعقدہ بیداری اسلامی کے اجتماعات میں تمام مسالک کو بلایا گیا، مفتی گلزار نعیمی

ایران میں منعقدہ بیداری اسلامی کے اجتماعات میں تمام مسالک کو بلایا گیا، مفتی گلزار نعیمی
اسلام ٹائمز۔ آغا مرتضٰی پویا کی رہائشگاہ پر منعقدہ اہل فکر و دانش کی محفل سے خطاب کرتے ہوئے جامعہ نعیمیہ اسلام آباد کے سربراہ مفتی گلزار احمد نعیمی کا کہنا تھا کہ مسالک کی بنیاد ہر تقسیم کو کم کرنے کی اشد ضرورت ہے، ہمارے امیرالمومنین اور خلفاء چاہتے ہیں کہ یہ تقسیم برقرار رہے۔ انتہائی مہارت کے ساتھ مسلمانوں کو صوفی اور سلفی اسلام میں تقسیم کیا گیا، صوفی کو سلفی اور سلفی کو صوفی کے ساتھ لڑایا گیا، جدہ میں منعقد ہونے والی امام اعظم کانفرنس میں پورے پاکستان سے صرف اور صرف حنیف جالندھری کو ہی کیوں بلایا جاتا ہے۔ کیا صرف وہی پورے پاکستان میں حنفی ہیں۔ مکہ کانفرنس میں صرف ساجد میر ہی کیوں تشریف لیجاتے ہیں، یہ Pick and choose ہم کب تک کرتے رہیں گے، فرمانروا اس رویئے پر سوچیں۔ ایران نے بیداری اسلامی کے حوالے سے احسن اقدام اٹھایا اور تمام مسالک کو بلایا گیا، تہران میں منعقدہ ایک کانفرنس کے موقع پر مولانا شیرانی نے شیعہ عقائد کو نشانہ بنایا لیکن دوسری جانب سے اعلٰی ظرفی کا مظاہرہ کیا گیا، سعودیہ کو بھی یہ روایت ڈالنا ہوگی۔ مسالک کے مابین فاصلوں کو کم کرنا ہوگا، اس حوالے سے حکومتیں اپنا کردار ادا کریں۔
خبر کا کوڈ : 444500
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش