0
Monday 26 Dec 2016 10:54

سانحہ 12 مئی، ایم کیو ایم کے ٹارگٹ کلر رفعت اللہ کے سنسنی خیز انکشافات

سانحہ 12 مئی، ایم کیو ایم کے ٹارگٹ کلر رفعت اللہ کے سنسنی خیز انکشافات
اسلام ٹائمز۔ شہر قائد کے علاقے ماڈل کالونی سے گرفتار سانحہ 12 مئی میں ملوث اہم ملزم نے دوران تفتیش تہلکہ خیز انکاشافات کر دیئے، ٹارگٹ کلر کے مطابق اسے سی ٹی ڈی کے دو اداروں نے گرفتار کیا، پھر رشوت لے کر بے گناہ قرار دیا اور چھوڑ دیا۔ تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقے ماڈل کالونی سے حساس اداروں اور پولیس کے ہاتھوں گرفتار ٹارگٹ کلر رفعت اللہ صدیقی عرف کامران کالو نے دوران تفتیش سنسنی خیز انکشاف کئے ہیں۔ ملزم سانحہ 12 مئی سمیت 34 افراد کی ٹارگٹ کلنگ میں ملوث ہے۔ ملزم نے انکشاف کیا ہے کہ سانحہ 12 مئی کے بعد سی ٹی ڈی نے گرفتار کیا، رشوت دی تو کوئی کیس درج نہیں کیا گیا اور اسے اسپیشل انوسٹی گیشن یونٹ کے حوالے کر دیا، جہاں سے وہ پانچ لاکھ روپے مزید رشوت دیکر رہا ہوگیا۔

ملزم نے انکشاف کیا شراب پی کر نشے میں عام لوگوں کو قتل کر دیتا تھا۔ ایم کیو ایم قیادت کے حکم پر متعدد افراد کی ٹارگٹ کلنگ کی، جن کو جانتا تک نہیں تھا۔ ملزم نے بتایا کہ شاہ فیصل میں گھر میں زبردستی داخل ہو کر خاتون سے زیادتی کی اور مزاحمت پر اس کے شوہر کو قتل کر دیا۔ کامران کالو نے مزید بتایا کہ قتل ہونے والے افراد کے بیشتر ورثا کو ڈرا دھمکا کر ایف آئی آر درج کرانے سے روک دیا جاتا تھا۔ علاقے میں لوگوں کو خوفزدہ کرکے زبردستی سستے مکان خرید کر مہنگے داموں بیچ دیتے تھے۔ علاقے سے بھتہ جمع کرکے ٹارگٹ کلنگ ٹیم کو دیتا تھا، جس سے اسلحہ خرید کر ٹارگٹ کلنگ کی جاتی تھی۔
خبر کا کوڈ : 594643
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب