0
Saturday 12 Oct 2019 12:38

آزادی مارچ ناجائز اور نااہل حکومت سے آزادی حاصل کر کے دم لے گا، مولانا فضل الرحمان

آزادی مارچ ناجائز اور نااہل حکومت سے آزادی حاصل کر کے دم لے گا، مولانا فضل الرحمان
اسلام ٹائمز۔ جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے چنیوٹ میں ختم نبوت کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ تمام پارٹیاں اسلام آباد جا ر ہی ہیں، مارچ حکومت سے آزادی کی منزل پر ہی ختم ہو گا، مدرسے کا طالبعلم ووٹ ڈالتا ہے تو اسے احتجاج کا بھی حق ہے، حکومت نے مارچ روکنے کے لیے کوئی رابطہ نہیں کیا، حکومت کے خلاف آزادی مارچ قومی سطح کی تحریک ہے، صرف اپوزیشن نہیں حکومتی جماعتیں بھی ہم سے اتفاق کر چکی ہیں، ناجائز حکومت مارچ روکنے کے لیے آمرانہ حربے استعمال کر رہی ہے، پارٹیوں کے فیصلے لیڈر کرتے ہیں اور نواز شریف نے ہمارا ساتھ دینے کا فیصلہ اور اعلان کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر حل نہیں کیا گیا بلکہ کشمیر کو بیچ دیا گیا۔

چنیوٹ میں ختم نبوت کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ آزادی مارچ ناجائز اور نااہل حکومت سے آزادی حاصل کر کے دم لے گا، تمام سیاسی اپوزیشن جماعتیں آزادی مارچ میں شریک ہوں گی، آزادی مارچ میں شرکت کے نون لیگ اور پیپلزپارٹی کے فیصلے کا خیرمقدم کرتا ہوں، راستہ روکنے کی کوشش کی گئی تو راستہ کھولیں گے، شہباز شریف مارچ میں شرکت سے نہیں ہچکچا رہے، پارٹیوں کے فیصلے لیڈر کرتے ہیں اور نواز شریف نے ہمارا ساتھ دینے کا فیصلہ کر لیاہے، میں را کے ایجنڈے پر نہیں پاکستان کے ایجنڈے پر کام کررہا ہوں۔ ان کا کہنا تھا آزادی مارچ میں ملک کے عوام کونے کونے سے نکلیں گے،، ہم بتائیں گے عوام کا سیلاب کیا ہوتا ہے، 27 اکتوبر کو مارچ کا آغاز کرنا ہے اور 31 اکتوبر کو اسلام آباد میں داخل ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ ساری دنیا کی چوریاں ایک طرف اور حکومتی پارٹی کی چوریاں ایک طرف، 70 سال کا قرضہ موجودہ حکومت کی جانب سے لیے گئے قرضے سے کم ہے، آئندہ 2 سال میں بھی ملک کی معاشی حالت بدلنے کی کوئی اُمید نہیں، سارا ملک بحران سے گزر رہا ہے، پہلے مرغیاں، پھر کٹے اور اب لنگر خانے چلائے جا رہے ہیں، یہ حکومت ناکام ہی نہیں ناجائز بھی ہے۔ مولانا فضل الرحمن کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی فنڈنگ کیس میں پورا ٹبر ہی چور نکلا، عوام کی بدحالی کی ذمہ دار حکومت کو ختم ہو جانا چاہیے۔ انہوں نے کہا تاجر سراپا احتجاج اور ڈاکٹر بلبلا رہے ہیں، آزادی مارچ کا ساتھ پی ٹی آئی کے منتخب نمائندے بھی دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا چین ناراض ہے، سی پیک منصوبہ رک گیا اور سفارت کاری میں ہار چکے ہیں، کشمیر کے مسئلے پر حکومت مگرمچھ کے آنسو بہا رہی ہے، نااہل حکومت کشمیر کا سودا کرچکی ہے۔

ان کا کہنا تھا ہمسایہ ممالک کے درمیان ایٹمی جنگ نہیں ہوتی، ریاست کی بات ہوتی ہے، یہ عمران خان کی حماقت ہے یا سازش؟، دنیا کے سامنے ایٹمی حملے کی بات کر کے وزیراعظم نے بہت بڑی حماقت کر دی۔ کانفرنس سے خطاب میں فضل الرحمن نے کہا کہ عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت پاکستان قوم کو بیدار کرنے کا فریضہ سرانجام دے کر پوری امت پر احسان عظیم کر رہی ہے، مذہبی طبقہ اپنے خاص ماحول میں دینی خدمت سرانجام دے کر اسلامی اقدار کو فروغ دے تو حکومت کو تشویش لاحق ہو جاتی ہے کہ یہ لوگ مذہب کے نام پر سیاست کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے ملین مارچز کا مقصد تحفظ ناموس رسالت اور اسلام دشمن قوتوں کا راستہ روکنا ہے، جب حکومت بیرونی مالیاتی اداروں کی شرائط پر آسیہ کو رہا کرے گی تو مذہبی طبقہ اپنے آئینی احتجاج کا حق ضرور استعمال کرے گا۔ چنیوٹ میں میڈیا سے گفتگو کے دوران انہوں نے مولانا عبدالقوی اور طاہر محمود اشرفی کے بیان پر جواب دینے سے انکار کردیا۔
خبر کا کوڈ : 821607
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے