0
Monday 21 Oct 2019 18:42

مولانا فضل الرحمٰن ملک کو بڑے حادثے کا شکار کرنا چاہتے ہیں، شوکت یوسفزئی

مولانا فضل الرحمٰن ملک کو بڑے حادثے کا شکار کرنا چاہتے ہیں، شوکت یوسفزئی
اسلام ٹائمز۔ وزیراطلاعات خیبر پختونخوا شوکت یوسفزئی کا کہنا ہے کہ مولانا فضل الرحمٰن ملک کو بڑے حادثے کا شکار کرنا چاہتے ہیں۔ اپنے ویڈیو پیغام میں شوکت یوسفزئی نے کہا ہے کہ مولانا فضل الرحمٰن کے دھرنے سے سب سے زیادہ نقصان کشمیر کاز کو ہو رہا ہے، ان کو چاہیئے کہ وہ اپنے فیصلے پر نظرثانی کریں، جب سے مولانا فضل الرحمٰن نے مارچ کا ڈھنڈورا پیٹھا ہے کشمیر کا ایشو پیچھے چلا گیا ہے جو کشمیریوں کے ساتھ بہت بڑی زیادتی ہے، یہ مودی کی خواہش تھی جو مولانا فضل الرحمٰن نے پوری کر دی۔ صوبائی وزیر نے کہا کہ وزیراعلٰی محمود خان نے امن و امان کیلئے وزراء پر مشتمل کمیٹی بنائی ہے جو اپوزیشن سے بھی رابطہ کرے گی۔ انہوں نے کہا میں نے جے یو آئی (ف) کے مقامی رہنماؤں سینیٹر حاجی غلام علی اور صوبائی ترجمان حاجی جلیل جان سے رابطے کئے ہیں، جبکہ وفاقی سطح پر بننے والی کمیٹی جے یو آئی (ف) سمیت اپوزیشن کے مرکزی رہنماؤں سے رابطے کر چکی ہے، تاہم مولانا فضل الرحمٰن ملک کے معاملات کو ٹھیک کرنے میں سنجیدہ نہیں ہے، وہ اس ملک میں افراتفری چاہتے ہیں، وہ اپنی شکست کا انتقام لینا چاہتے ہیں۔

شوکت یوسفزئی نے کہا کہ یہ فیصلہ عوام نے کرنا ہے کہ وہ ملک کی ترقی چاہتے ہیں یا افراتفری، خیبر پختونخوا اور پاکستان کئی سال سے دہشت گردی کا شکار ہیں، جس کی وجہ سے تاجر برادری پریشان رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس قسم کا دھرنا اسوقت کسی طور پر بھی درست نہیں سمجھا جاسکتا۔ دوسری جانب آزادی مارچ سے نمٹنے کیلئے کے پی پولیس نے تیاریاں شروع کر لی، نوشہرہ خیر آباد کے مقام پر اٹک پل کے دونوں اطراف  کنٹینرز رکھ دیئے گئے۔ پولیس کے مطابق آزادی مارچ کے دوران جی ٹی روڈ کو خیر آباد کے مقام پر بند کیا جائے گا اور گورنمنٹ ہائیر سیکنڈری سکول خیر آباد میں پولیس کی نفری پڑاؤ ڈالے گی۔ ذرائع کے مطابق آزادی مارچ کے شرکاء سے نمٹنے کیلئے تقریباََ 1 ہزار پولیس اہلکاروں کی نفری خیر آباد اٹک پل پر تعینات کی جائے گی۔
خبر کا کوڈ : 823274
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب