0
Saturday 9 Nov 2019 19:47

کوئٹہ میں استاد کے بدترین تشدد سے طالبعلم اسپتال منتقل

کوئٹہ میں استاد کے بدترین تشدد سے طالبعلم اسپتال منتقل
اسلام ٹائمز۔ کوئٹہ کے سرکاری اسکول میں استاد نے اول جماعت کے طالبعلم کو بدترین تشدد کا نشانہ بناکر زخمی کر دیا۔ پولیس کے مطابق سول لائن تھانے کی حدود میں پوسٹل کالونی کے گورنمنٹ بوائز پرائمری اسکول میں ٹیچر نے اول جماعت کے طالبعلم حکمت اللہ پر بدترین تشدد کیا، جس کی وجہ سے اس کی حالت غیر ہوگئی۔
متاثرہ بچے کے والد محب اللہ کا کہنا ہے کہ استاد عبدالقادر نے بچے کو اسکول تاخیر پر آنے سے تشدد کا نشانہ بنایا، جس سے اس کے ہاتھ، کمر، پیٹھ اور جسم کے مختلف حصوں میں شدید زخم آئے۔ درد اور تکلیف کے باعث بیٹا بخار میں مبتلا ہوگیا، جس کے بعد علاج کے لئے سول اسپتال منتقل کیا گیا۔

سول لائن تھانہ پولیس نے ملزم عبدالقادر کو گرفتار کرکے مقدمہ درج کرلیا ہے۔ واضح رہے کہ 13 اپریل 2019ء کو ڈائریکٹر ایجوکیشن اسکولز بلوچستان کی جانب سے مراسلہ جاری کیا گیا تھا، جس میں صوبے بھر کے تمام سرکاری اور نجی اسکولوں میں طلباء و طالبات کو تشدد اور جسمانی سزا دینے پر پابندی عائد کردی گئی تھی۔ مراسلہ کے مطابق بلوچستان کے اسکولوں میں ضابطۂ اخلاق کے برخلاف سزائیں دی جا رہی ہیں، جس سے بچے تعلیم چھوڑ رہے ہیں۔ خود اعتمادی میں کمی سے طلباء کا سیکھنے کا عمل بھی بری طرح  متاثر ہو رہا ہے۔ مراسلہ میں ڈائریکٹر ایجوکیشن اسکولز نے ڈویژنل ڈائریکٹر اور ڈی ای اوز کو پابندی پر عملدرآمد یقینی بنانے کی ہدایت کی ہے۔ کسی بھی شکایت کی صورت میں متعلقہ ذمہ داروں کیخلاف کارروائی کی جائے گی۔
 
خبر کا کوڈ : 826496
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے