0
Monday 20 Jan 2020 21:20

بھارت میں علیحدگی کی 80 تحریکیں چل رہی ہیں، متنازعہ شہریت بل نے اس مسلئہ کو اور سنگین بنا دیا ہے، سید فخرامام 

بھارت میں علیحدگی کی 80 تحریکیں چل رہی ہیں، متنازعہ شہریت بل نے اس مسلئہ کو اور سنگین بنا دیا ہے، سید فخرامام 
اسلام ٹائمز۔ چیئرمین کشمیر کمیٹی پاکستان، سابق سپیکر و ممبر قومی اسمبلی سید فخر امام نے کہا ہے کہ ہمارا کشمیر کاز انصاف اور عدل پر مشتمل ہے اور پوری دنیا نے کشمیر کو متنازعہ علاقہ تسلیم کیا ہے، سلامتی کونسل کا مسئلہ کشمیر پر ہونے والا دوسرا اجلاس ہماری بڑی کامیابی ہے، انسانی حقوق کی جتنی پامالی انڈیا کشمیر میں کررہا ہے دنیا میں کہیں نہیں ہو رہی ہے، دنیا کی سب ہیومن رائٹس تنظیمیں کشمیریوں پر ہونے والے مظالم پر آواز اٹھا رہی ہیں، وزیراعظم نے اقوام متحدہ میں بھرپور طریقے سے کشمیریوں کی نمائندگی کرتے ہوئے دنیا کو مسئلہ کشمیر کی سنگین صورتحال سے آگاہ کیا، وزیراعظم عمران خان کی یو این میں تقریر کا 70 فیصد حصہ کشمیر پر مشتمل تھا، اس سال 5 فروری یوم یکجہتی کشمیر بھرپور قومی یکجہتی کے ساتھ منایا جائے گا۔ مسئلہ کشمیر پر ہم سب ایک ہیں اور تمام پارٹیوں کا اتفاق ہے کہ کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے بحیثیت مہمانِ خصوصی انسٹیٹیوٹ آف سدرن پنجاب کی کریکٹر بیلڈنگ سوسائٹی کے زیراہتمام ISP کے آڈیٹوریم میں منعقدہ "کشمیر کانفرنس"سے خطاب میں کیا۔

کشمیر کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سید فخر امام کا مزید کہنا تھا کہ بھارت نے ہمیشہ ہر محاذ پر مسئلہ کشمیر کو پس پشت ڈالنے اور دبانے کی کوشش کی ہے، کشمیر مسئلہ پر پاک بھارت تین جنگیں ہو چکی ہیں، بھارت خود اقوامِ متحدہ میں مسئلہ کشمیر لیکر گیا، جہاں دو قراردادیں پاس ہوئیں، جن میں سے ایک میں جموں و کشمیر کو متنازعہ علاقہ تسلیم کیا گیا،تو دوسری میں بذریعہ ووٹ کشمیری اپنے مستقبل کا خود فیصلہ کریں، انڈیا ہمیشہ مذاکرات سے بھاگ گیا۔ سید فخر امام نے کہا کہ کشمیریوں کو ہر صورت استصواب رائے کا حق دیا جائے، بھارت میں علیحدگی کی 80 تحریکیں چل رہی ہیں، متنازعہ شہریت بل نے اس مسئلہ کو اور سنگین بنا دیا ہے، خود کو جمہوری اور سیکولر ملک کہلانے والا انڈیا آر ایس ایس کی ہندو توا سوچ کے زیرتسلط ہے، مودی حکومت نے کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرکے وہاں 9 لاکھ فوج تعینات کر کے کشمیر کو دنیا کا سب سے بڑا فوجی زون بنادیا۔

چیئرمین کشمیر کمیٹی سید فخر امام نے کہا ہے کہ پہلی مرتبہ مسئلہ کشمیر عالمی میڈیا کی توجہ کا مرکز بنا ہے، مسئلہ کشمیر پر بھارت بیک فٹ پر چلا گیا، بھارت کشمیر میں کسی کو داخلے کی اجازت نہیں دے رہا، بھارت نے کشمیر کی معیشت کو بہت نقصان پہنچایا ہے۔ ملتان میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سید فخر امام نے کہا کہ نیویارک ٹائمز سمیت عالمی اداروں نے کشمیر پر رپورٹس دیں، عالمی اداروں کی رپورٹس کے باعث بھارت پیچھے چلا گیا، پہلی بار مقبوضہ کشمیر عالمی میڈیا کی توجہ کا مرکز بنا، چیئرمین کشمیر کمیٹی نے کہا کہ ایک لاکھ سے زائد کشمیری شہید ہو چکے ہیں، 13 سے 14 ہزار خواتین کی عصمت دری کی گئی،       5اگست کے بعد ہزاروں بچے جیلوں میں قید ہیں۔ چیئرمین کشمیر کمیٹی سید فخرامام  نے کہا کہ جنرل اسمبلی میں وزیراعظم نے 70سے 75 فیصد تقریر کشمیر پر کی، جنرل اسمبلی میں وزیراعظم کی تقریر کو توجہ سے سناگیا، کشمیر سے متعلق دنیا میں پاکستان کے بیانیے کو پذیرائی ملی، چیئرمین کشمیر کمیٹی نے کہا کہ قائداعظم نے کہا تھا کشمیر ہماری شہہ رگ ہے، کشمیر کے بغیر پاکستان مکمل نہیں ہوسکتا، کشمیر پاکستان کا مستقبل ہے۔
خبر کا کوڈ : 839644
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

ہماری پیشکش