0
Friday 5 Jun 2020 23:21

علامہ ساجد نقوی کی امریکہ و اسرائیل کیجانب سے عالمی فوجداری عدالت پر اثر انداز ہونیکی مذمت

علامہ ساجد نقوی کی امریکہ و اسرائیل کیجانب سے عالمی فوجداری عدالت پر اثر انداز ہونیکی مذمت
اسلام ٹائمز۔ شیعہ علماء کونسل پاکستان کے سربراہ علامہ سید ساجد علی نقوی نے امریکہ اور اسرائیل کی جانب سے عالمی فوجداری عدالت پر اثر انداز ہونے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم ایک عرصہ سے متوجہ کرتے آرہے ہیں کہ صیہونیت اور ناجائز ریاست کا اصل پشتی بان سامراجی قوتیں ہیں، اسرائیلی جنگی جرائم کا مقدمہ عالمی فوجداری عدالت میں رکوانے کی دھمکی سے اب دنیا پر آشکار ہوچکا کہ انسانیت کا سب سے بڑا دشمن اور دہشتگرد یہی استعمار ہے، ایمنسٹی انٹرنیشنل کی رپورٹ دنیا اور امہ کی آنکھیں کھولنے کے لئے کافی ہے، کیا او آئی سی بھی اس طرف متوجہ ہو گی۔؟ مقبوضہ بیت المقدس و فلسطین تا مقبوضہ کشمیر استعمار ی قوتوں کے ظلم کا شکار ہیں، مسلم حکمرانوں کو اپنے دائروں سے نکل کر کردار ادا کرنا ہوگا، بھارتی ریاستی مظالم کی بھی مذمت اور دھمکیوں کو مسترد کرتے ہیں۔ اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ ہم ایک عرصہ سے بین الاقوامی برادری باالخصوص اسلامی دنیا اور سنجیدہ فکر طبقات کو متوجہ کرتے آرہے ہیں کہ صہیونیت، ہندوتوا جڑواں بہنیں ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ فلسطین و کشمیر سمیت دنیا میں ظلم و ستم روا رکھنے والے جابرانہ نظام کا اصل پشتی بان سامراج ہی ہے، جبکہ اب اسرائیل کے جنگی جرائم پر عالمی فوجداری عدالت کی تحقیقاتی رپورٹ اور مقدمہ کے اندراج میں رکاوٹ ڈالنے سے واضح ہوگیا ہے کہ اپنے مذموم و مکروہ عزائم کی خاطر یہ صیہونی اور استعماری قوتیں کسی بھی حد تک جاسکتی ہیں۔ ایک طرف اقوام متحدہ کا وہ حکم نامہ ہے جس میں کہا گیا کہ اسرائیلی جنگی جرائم کی بین الاقوامی تحقیقات کرائی جائیں گی، مگر دوسری جانب انتہائی ڈھٹائی سے اس میں رکاوٹ بننے والا استعمار ہے، جسے کسی بھی ریاستی یا بین الاقوامی قوانین اور ضوابط کی کوئی پرواہ نہیں ہے۔ اس صورتحال نے ایک مرتبہ پھر واضح کردیا ہے اور دنیا کی آنکھیں کھول دی ہیں۔ کیا اس ساری صورتحال میں امت مسلمہ کی نمائندہ تنظیم او آئی سی بھی اپنی ذمہ داریاں نبھائے گی۔؟ اب تو ایمنسٹی انٹرنیشنل تک نے یہ کہہ دیا ہے کہ غاصب نظام نے فلسطینی عوام کے حقوق کو پامال کردیا ہے اور ان کی سانس تک بند کردی ہے۔

علامہ سید ساجد علی نقوی کا مزید کہنا تھا کہ آئے روز مسجد اقصیٰ کی بے حرمتی، نہتے فلسطینیوں کا قتل عام، ان کی آبادیوں، املاک اور کھیتوں کو تاراج کرنا معمول بن چکا ہے۔ مشرق وسطیٰ میں اسرائیل اور جنوبی ایشیا میں انڈیا دونوں استعماری قوتوں کے آلہ کار ہیں، جن سے نہ صرف ان ممالک کے عوام بلکہ ہمسایہ ممالک تک ان کے شر سے محفوظ نہیں ہیں، مسلم حکمرانوں کو اپنے دائروں سے نکل کر امت مسلمہ کے مسائل کے لیے مل بیٹھنا ہوگا، اگر اس معاملے پر سنجیدگی دکھائی جاتی تو آج افغانستان، عراق، شام اور یمن سمیت دیگر ممالک میں یہ صورتحال نہ ہوتی۔ انہوں نے حالیہ دنوں میں مقبوضہ کشمیر میں ہونے والے مظالم اور نہتے کشمیریوں کو نشانہ بنانے پر گہرے دکھ کا اظہار کیا جبکہ آئے روز بھارتی دھمکیوں کی بھی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان ایک ایٹمی جمہوری ریاست ہے، جس کا دفاع مضبوط ہے، بھارت کو کسی بھول میں نہیں رہنا چاہیے۔ پوری قوم اور افواج متحد ہوکر اپنے دشمن کا مقابلہ کرنا جانتے ہیں۔
خبر کا کوڈ : 866808
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش