0
Friday 3 Jul 2020 21:12

منور حسن امت مسلمہ کے اتحاد کو اسلام کی قوت تصور کرتے تھے، اعجاز ہاشمی

منور حسن امت مسلمہ کے اتحاد کو اسلام کی قوت تصور کرتے تھے، اعجاز ہاشمی
اسلام ٹائمز۔ جمعیت علمائے پاکستان کے مرکزی صدر اور نائب صدر متحدہ مجلس عمل پیر اعجاز احمد ہاشمی نے کہا ہے کہ ملی یکجہتی کونسل نے پاکستان میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی پیدا کرنے میں بنیادی کردار ادا کرکے مذہبی منافرت کو ختم کیا، جبکہ ایم ایم اے نے نظام مصطفی کے نفاذ کو اپنی سیاسی جدوجہد کا محور قرار دیا۔ منصورہ لاہور میں سید منور حسن کی یاد میں منعقدہ سیمینار کے موقع پر خصوصی پیغام میں انہوں نے کہا کہ سابق امیر جماعت اسلامی سے ان کی شناسائی ملی یکجہتی کونسل کی قیام سے ہوئی، جب وطن عزیز میں جاری خون خرابہ اور فرقہ واریت کے خاتمے میں قاضی حسین احمد اور مولانا شاہ احمد نورانی کی قیادت میں اہم کردار ادا کیا اور موثر ضابطہ اخلاق تیار کرکے مشترکات پر دستخط کئے۔

ان کا کہنا تھا کہ سید منور حسن کو نظام مصطفی سے عشق کی حد تک لگاو تھا۔ انہوں نے محبت، شرافت، مروت اور تحمل کو شعار بنایا اور مولانا مودودی کے نظریات پر اپنی زندگی کے آخری دن تک قائم رہے، وہ امت مسلمہ کے اتحاد کو اسلام کی قوت تصور کرتے تھے۔ نظام مصطفی کے قیام کیلئے اتحاد ملت اسلامیہ ضروری قرار دیتے ہوئے پیر اعجاز ہاشمی نے کہا کہ فرقہ واریت پھر سر اٹھا رہی ہے اور افسوسناک بات ہے، اس مذموم مقصد کیلئے سوشل میڈیا پلیٹ فارم کو استعمال کیا جا رہا ہے۔ پاکستان میں تمام مکاتب فکر کی مذہبی جماعتوں کے دونوں اتحادوں نے اہم کردار ادا کیا ہے اور ہم سمجھتے ہیں کہ آج وقت ہے کہ دوبارہ فرقہ واریت کی بیخ کنی کیلئے کام کرنا چاہیے، ملی یکجہتی کونسل اور متحدہ مجلس عمل کو جدید تقاضوں کے مطابق فرقہ واریت کاسرطان ختم کرنے کیلئے اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔
خبر کا کوڈ : 872303
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

ہماری پیشکش