0
Thursday 3 Dec 2020 11:45

نااہل اور کرپٹ افسران کیخلاف ایکشن

نااہل اور کرپٹ افسران کیخلاف ایکشن
اسلام ٹائمز۔ وفاقی حکومت نے نااہل اور کرپٹ افسران کے خلاف بڑا ایکشن شروع کر دیا، کئی سینئر بیوروکریٹس کےخلاف کارکردگی و مس کنڈکٹ کے حوالے سے تحقیقات کی جا رہی ہیں۔ اعلیٰ سطح ذرائع نے بتایا ہے کہ موجودہ دور حکومت میں بیوروکریٹس کےخلاف یہ پہلا ایکشن ہوا جس میں سیکرٹریٹ گروپ کے گریڈ 19 کے سینئر افسر محمد احمد خان کو مس کنڈکٹ اور نااہلی پر سول سرونٹ ایکٹ 1973ء کے تحت سرکاری نوکری سے فارغ کر دیا گیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہےکہ ان کے خلاف ایک سال سے محکمہ جاتی انکوائری جاری تھی، سرکاری حکام کہتے ہیں کہ محمد احمد خان کو سول سرونٹ رولز 1977ء کے تحت ایپلٹ اتھارٹی کو 30 دن میں اپیل کرنے کا حق ہو گا۔ حکام کے مطابق سول سرونٹ ایکٹ 1973ء کے رولز کے تحت نااہلی و مس کنڈکٹ کی سب سے بڑی سزا سرکاری ملازمت سے فوری برطرفی ہے۔

سرکاری ذرائع کے مطابق وفاقی بیوروکریسی سیکرٹریٹ گروپ کے گریڈ 19 کے سینئر افسر عبدالباسط کی بری کارکردگی و مس کنڈکٹ پر موجودہ گریڈ سےتنزلی کر دی گئی البتہ انہیں بھی اپلیٹ اتھارٹی میں 30 دن کے اندر سزا کو چیلنج کرنے کی حق حاصل ہو گا۔ میڈیا نے دونوں افسران کےخلاف محکمانہ کارروائیوں کے حوالے سے سرکاری حکم نامہ حاصل کر لیا ہے۔ سرکاری حکام کےمطابق بیوروکرسی کی کارکردگی کو بہتر اور کرپشن سے پاک کرنے کے لیے وزیراعظم عمران خان نے سول سرونٹس ایکٹ 1973ء کے رولز میں ضروری ترامیم کے ساتھ سول سرونٹس کارکردگی اور نظم و ضبط قواعد 2020ء کی منظوری دی جس پر عملدرآمد کا آغاز کر دیا گیا ہے۔
خبر کا کوڈ : 901364
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش